Breaking NewsNationalتازہ ترین

تحفظ والدین آرڈیننس:ضیف والدین کو گھر سے نکالنے کا ایک اور کیس سامنے آگیا

تحفظ والدین آرڈیننس کے نفاذ کے بعد ضعیف والدین کو گھر سے نکالے جانے کے واقعات رپورٹ ہونے لگے۔
ضلعی ملتان میں والدین کو گھر سے بیدخل کرنے کا ایک ہفتے میں دوسرا واقعہ سامنے آگیا ہے۔ڈپٹی کمشنر علی شہزاد سے کائیاں پور کے رہائشی ضعیف العمر اصغرعلی نے بیٹوں کی جانب سے گھر سے نکالے جانے کی شکایت کی جس کا ڈپٹی کمشنر کا شکایت کا سخت نوٹس اور اسسٹنٹ کمشنر سٹی کو فوری طور پر داد رسی کا حکم دیا۔
اسسٹنٹ کمشنرسٹی خواجہ محمد عمیر محمود نے اصغرعلی کے دو بیٹوں کو اپنے آفس طلب کر لیا۔ اس ناروا سلوک پر بیٹوں کی سخت سرزنش کی۔خواجہ عمیر نے بتایا کہ تحفظ والدین آرڈیننس کے تحت ڈپٹی کمشنر کو والدین کو گھر سے بیدخل کرنیوالوں کو ایک سال قید اور50 ہزار روپے جرمانے کا اختیار حاصل ہے۔
اسسٹنٹ کمشنر کے آفس میں اصغر علی کے بیٹوں نے اپنے والد سے معافی مانگ لی اور آئندہ دیکھ بھال کرنے کا بیان حلفی بھی دے دیا۔ضعیف العمر اصغرعلی کے اطمینان کے بعد اسے بیٹوں کے ہمراہ گھر روانہ کر دیا۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

پاکستان میں کرونا وائرس کی صورت حال

گھر پر رہیں|محفوظ رہیں