Breaking NewsEducationتازہ ترین

نااہل افسروں کو بچانے کےلئے وائس چانسلر زکریا یونیورسٹی کا انوکھا حکم

میپکو اور زکریا یونیورسٹی شعبہ منٹی نینس کی ملی بھگت سے بجلی کی فراہمی نا ممکن ہوگئی ،بار بارٹرپنگ سے تمام کام بند ہوگئے ، پانی کی قلت ، وائس چانسلر نے ایئر کنڈیشنر بند کرنے کے احکامات جاری کردئے ، طلبا نے پیپر ز کا بائیکاٹ کا اعلان کردیا۔

زکریا یونیورسٹی میں اس وقت بجلی کا شدید بحران ہے ، الگ فیڈر ہونے کے باوجود بجلی کی ٹرپنگ سوالیہ نشان بن گئی۔
گزشتہ 5 ایام میں زکریا یونیورسٹی میں ٹرپنگ سے سامان جلنے کی متعدد واقعات ہوچکے ہیں، جبکہ بجلی کے باربار آنے جانے سے دفاتر میں کام بند ہوکر رہ گیا ہے ، کلاسز بھی نہیں ہورہی ہیں جبکہ درجہ حرارت بڑھتا جارہا ہے، شعبہ منٹی نینس کی غفلت اور میپکو حکام کی ملی بھگت نے یونیورسٹی طلبا ، اساتذہ اور عملے کی زندگی اجیرن کردی ہے ۔

گزشتہ روز یونیورسٹی میں پانی ختم ہوگیا ،مساجد میں تیمم کے بعد نمازیں ادا کی گئیں،لیکچر ر نہ ہوسکے ، ایڈمن بلاک سائیں سائیں کرتا رہا ، ایسےوائس چانسلر کے انوکھے احکامات سے اساتذہ میں غم وغصے کی لہر دوڑ گئی۔

انہوں نے اپنا وٹس ایپ پیغام جاری کیا کہ تمام شعبے اپنے ایئر کنڈیشنر بند کردیں، لوڈ کا مسئلہ آگیا ہے انہوں نے بھی وائس چانسلر آفس کے اے سی بند کردئے ہیں اور پنکھے لگالئے ہیں۔
اس لئے تمام اساتذہ فوری طور پر پنکھوں کا بندوبست کریں، جب تک بجلی ٹھیک نہیں ہوتی کلاسز میں بھی پنکھے چلائے جائیں ، بجلی کی بچت بھی کریں تاکہ امتحانات شیڈول کے مطابق ہوسکیں۔

جبکہ دوسری طرف طلبا نے ان حالات میں پیپروں کا بائیکاٹ کردیا ہے ان کاکہنا ہے کہ شدید گرمی میں بیٹھ کرپیپر نہیں دئے جاسکتے، وائس چانسلر نااہل افراد کے خلاف کارروائی کے بچائے ٹرک کی بتی کے پیچھے لگارہے ہیں۔

علاوہ ازیں اساتذہ کا شدید ردعمل سامنے آیا ہے ان کا کہنا ہے کہ شعبہ منٹی نینس میں سول ورک کے افسر لگادئے گئے ہیں ان کو بجلی یا الیکڑک کا کوئی تجربہ نہیں ہے، ان کی نااہلی کو چھپایا جارہا ہے وائس چانسلر کے ان چہتے افسروں نے اپنے فون بھی بند کررکھے ہیں تاکہ شکایات نہ سننی پڑیں پہلے کبھی ایس انہیں ہوا ۔

وائس چانسلر اس بحران پر قابو پانے کےلئے الیکڑک کے افسروں کا تعینات کریں تاکے یونیورسٹی اساتذہ ، افسر اورملازمین اس کرب سے نجات پاسکیں ۔

میپکو حکام کا کہنا ہے کہ یہ زکریا یونیورسٹی کے شعبہ منٹی نینس کی غفلت ہے ہمارا کوئی قصور نہیں ہے یونیورسٹی کا 38سو کے وی اے لوڈ منظور ہے جس میں یونیورسٹی 26سو کے وی اے تک استعمال کررہی ہے لوڈ کا مسئلہ بھی نہیں بلکے یونیورسٹی انجینئرز کی نااہلی ہے، انہوں لو پروفائل کنڈیکٹر لگائے ہیں ان کو پہلے بھی آگاہ کیاگیا تھا مگرا ن کے پی ڈی اور ایکیسئن نے ہماری تجاویز کو مستر د کرتے ہوئے لوپروفائل کنڈیکٹر انسٹال کرنے کی ضد کی، جس کا خمیازہ بھگت رہے ہیں ، یونیورسٹی حکام اپنی نااہلی میپکو پر نہ ڈالے ۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button

پاکستان میں کرونا وائرس کی صورت حال

گھر پر رہیں|محفوظ رہیں