Breaking NewsNationalتازہ ترین

میپکو کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کا نادر شاہی حکم : افسروں کو کروڑوں کی گاڑیاں کوڑیوں کے بھاؤ دینے کافیصلہ

میپکو ملتان ریجن کا میپکو افسران کو نوازنے کا انوکھا فیصلہ، میپکو منیجمنٹ اور بورڈ آف ڈائریکٹرز نے ملی بھگت سے میپکو افسران کو کروڑوں روپے مالیت کی قیمتی گاڑیاں دینے کا فیصلہ کرلیا ۔

پہلے مرحلے میں 30جون تک 188ٹویوٹا، ہنڈا، سوزوکی دوسرے مرحلے میں 227گاڑیاں ستمبر تک مانگ لیں۔

حیران کن صورتحال یہ ہے کہ میپکو افسر لینے والی گاڑیوں کے 60 فیصد جبکہ 40پرفیصد میپکو دے گا اور ریٹائر ہونے کے بعد گاڑی مالک بھی میپکو آفیسر ہو گا، ہر ماہ گاڑی کی سروس اور مینٹینینس کے لئے 15ہزار، 3سو لٹر پٹرول کی مد میں ملے گا اور گاڑیاں چلانے کے بھی افسران خود مجاز ہوں گے۔

ذرائع کے مطابق پاکستان جیسے غریب ملک میں میپکو ریجن ملتان کی میپکو منیجمنٹ اور بی او ڈی نے میپکو افسران کو نوازنے کے لئے مبینہ طور پر کروڑوں روپے مالیت کی قیمتی گاڑیاں دینے کے لئے منعقدہ اجلاس میں انوکھے فیصلے کئے ہیں، اور پہلے مرحلے میں 30جون تک کروڑوں روپے کی 188ٹویوٹا، ہنڈا، سوزوکی دوسرے مرحلے میں 227گاڑیاں ستمبر تک مانگ لی ہیں تاکہ میپکو افسران کو وہ قیمتی گاڑیاں دی جاسکیں۔

میپکو افسر لینے والی گاڑیوں کے 60پرفیصد جبکہ 40پرفیصد میپکو دے گا، اور ریٹائر ہونے کے بعد گاڑی مالک بھی میپکو آفیسر ہی ہو گا۔

علاوہ ازیں میپکو منیجمنٹ اور بی او ڈی نے 18لاکھ سے 15لاکھ کی پرانی قیمتی گاڑیاں افسران کو پانچ پانچ لاکھ روپے میں میپکو افسران کو بیچنے کا فیصلہ کر لیا ہے، جس کی وجہ سے وہ ان قیمتی گاڑیوں کے مالک ہوں گے جس کے بہت جلد ٹینڈر ہوجانے تھے لیکن حکومت کے جانے کے بعد معاملہ چند روز کے لئے کھٹائی میں پڑ گیا ہے تاہم آئند ہ چند روز میں ٹینڈر ہونے کا امکان ہے۔

لیکن ایسے فیصلوں کی وجہ سے میپکو ریجن ملتان کے چار سو سے زائد ڈرائیوروں کے سروں پرنوکری ختم ہونے کی تلوار لٹک گئی ہے، کیونکہ میپکو افسران نئی اور پرانی گاڑیاں لینے پر وہ خود گاڑیاں گھروں یا کہیں بھی لے جا اور آ سکیں گے ۔

اس صورتحال میں عوامی وسماجی حلقوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے اور انہوں نے وزیراعظم، چیئرمین واپڈا، تحقیقاتی اداروں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس سلسلے میں فی الفور نوٹس لیں، کیونکہ پاکستان کے کسی بھی صوبے میں میپکو افسران کو نوازنے کے لئے گاڑیوں کا مالک بنائے جانے کی کوئی روایت نہیں ہے۔

جب کہ دوسری طرف کسٹمر سے ٹرانسفارمر اور بجلی کے میٹرز لگائے جانے کی مد میں کروڑوں روپے میپکو ملتان ریجن لے چکی ہے ، لیکن وہ سالہا سال سے میپکو دفاتر میں دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں، اور ان کی کوئی شنوائی نہیں کی جا رہی ہے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button

پاکستان میں کرونا وائرس کی صورت حال

گھر پر رہیں|محفوظ رہیں