Breaking NewsNationalتازہ ترین

کپاس کی منافع بخش پیداوار کے لئے جدید ٹیکنالوجی کی فراہمی وقت کی اہم ضرورت ہے:ڈاکٹر زاہد محمود

کپاس کی منافع بخش پیداوار میں اضافہ کے لئے جدید ٹیکنالوجی وقت کی اہم ضرورت ہے، اور تمام اسٹیک ہولڈرز کی مشترکہ کوششوں کے ذریعے ہی ملک میں کپاس کی بحالی وترقی ممکن ہے۔

یہ بات ڈائریکٹر سنٹرل کاٹن ریسرچ انسٹیٹیوٹ ملتان ڈاکٹر زاہد محمود نےمنعقدہ ایک روزہ ریفریشر کورس برائے کپاس کی پیداواری ٹیکنالوجی کے شرکاء سے اپنے خطاب میں کہی۔

اس کے علاوہ ان کا مزید کہنا تھا کہ کپاس کے کسان کی خوشحالی مضبوط ملکی معیشت کی ضامن ہے اور ہم کپاس کی پیداوار بڑھانے کے لئے شارٹ ٹرم اور لانگ ٹرم منصوبہ بندی کے لئے مختلف منصوبوں پر کام کر رہے ہیں۔

ڈاکٹر زاہد محمود نے اپنے خطاب میں کہا کہ ریفریشر کورس سے نہ صرف کپاس کے رقبہ میں اضافہ ہوگا، بلکہ پیداوار میں بھی خاطر خواہ اضافہ ہوگا۔

اس ریفریشرکورس کا مقصد نہ صرف پبلک و پرائیویٹ سیکٹرزکے درمیان ہم آہنگی پیدا کرنا ہے، بلکہ کپاس سے متعلق جدید تحقیقی نتائج کو موئثر انداز میں کسانوں تک پہنچانا اصل مقصود ہے جس سے کسانوں کو بروقت رہنمائی ملنے سے کپاس پر کسانوں کا اعتماد بحال ہوگا اور ملک میں کپاس کے رقبہ میں بھی خاطر خواہ اضافہ ہو گا۔

ریفریشر کورس کے شرکاء میں پرائیویٹ سیکٹر، سیڈ، فرٹیلائزرز،پیسٹی سائڈز،ترقی پسند کاشتکار اور مختلف این جی اوزسے تعلق رکھنے والے 60سے زائد آفیسران نے حصہ لیا۔

ماہرین کا کہنا تھا کہ کہ کپاس کی اچھی پیداوار کے حصول کے لیے کپاس کے کاشتکار بہتر مینجمنٹ پر توجہ دیں، کیونکہ کپاس کی اچھی پیداوار کے حصول کے لئے بہترمینجمنٹ نہایت ضروری ہے ۔

سی سی آر آئی ملتان کے مختلف شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے زرعی سائنسدانوں نے شرکاء کو کپاس کے تحقیقی میدان میں اپنے اپنے تحقیقاتی نتائج اور سرگرمیوں بارے خصوصی لیکچرز دئیے۔

ریفریشر کورس میں سائبان گروپ کے ٹریننگ مینیجر حبیب الرحمن نے خصوصی طور پر شرکت کی اور زرعی زہروں کے استعمال کے حفاظتی طریقہ کار پر خصوصی گفتگو کی۔

حبیب الرحمن نے تربتی شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مجھے خوشی ہے کہ سی سی آر آئی کے زرعی ماہرین کپاس کی تحقیقی میدان میں شب و روز مصروف عمل ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اس ریفریشرکورس سے نہ صرف کپاس کی فی ایکڑ پیداوار میں خاطر خواہ اضافہ ہوگا بلکہ اس سے ملکی معیشت بھی مضبوط ہوگی۔

سی سی آر آئی ملتان کے تمام شعبہ جات کے سربراہان نے تربیتی شرکا ء کو کپاس کی جدید کاشتکاری طریقہ کار جن میں کاشت سے پہلے کے عوامل،کپاس کی بجائی، جڑی بوٹیوں کا تدارک،آب پاشی،مناسب کھادوں کا استعمال، کپاس کی بیماریاں،کیڑے مکوڑوں کا انسداد، کپاس کی اقسام کے چناؤ کا طریقہ کار، کپاس کی فائبر خصوصیات، کپاس کی پیداواری ٹیکنالوجی میں ذرائع ابلاغ کے کردار کی اہمیت اور کپاس کی جدید ٹیکنالوجی کی سفارشات، کسانوں تک منتقلی کی اہمیت بارے تفصیل سے لیکچرز دئے۔

ڈائریکٹر سی سی آر آئی ڈاکٹر زاہد محمود نے کہا کہ ہمارا مقصد کپاس کے کاشتکاروں کو ایسی اقسام مہیا کرنا ہیں جن کی پیداواری صلاحیت بہتر،ریشہ لمبا اور کن زیادہ ہو اور اس کے علاوہ موسمیاتی تبدیلیوں کو مدنظر رکھ کر کپاس کی ایسی اقسام تیار کرنا ہیں جو کم پانی اور زیادہ درجہ حرارت میں اچھی پیداوار دے سکیں ۔

ریفریشر کورس کے شرکاء نے ادارہ ہذا کی تیار کردہ مختلف مشینوں کا معائنہ بھی کیااور سی سی آر آئی ملتان کے زرعی سائنسدانوں کی کپاس کے میدان میں تحقیق و ترقی میں کارکردگی کو بے حد سراہا ، اور تربیتی پروگرام کے آغاز و اختتام پرکارکردگی جانچ پڑتال کا امتحان بھی لیا گیا۔

ڈائریکٹر سی سی آر آئی ملتان ڈاکٹر زاہد محمود نے شرکاء میں تربیتی سرٹیفیکیٹ بھی تقسیم کئے، اور نمایاں پوزیشنز حاصل کرنے والوں کو انعامات بھی دئے گئے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button

پاکستان میں کرونا وائرس کی صورت حال

گھر پر رہیں|محفوظ رہیں