Breaking NewsEducationتازہ ترین

یو ایس ایڈ کے تعاون سے زرعی یونیورسٹی میں سیمینار

ایم این ایس زرعی یونیورسٹی میں یو ایس ایڈ اور چیمبر آ ف کامرس کے تعاون سے جنوبی پنجاب پرائیویٹ سیکٹر کی شراکت داری کے سلسلے میں دو روزہ سیمنار منعقد کیا گیا۔

اس موقع پر امریکی قونصلیت جرنل ولیم میکینیول،یو ایس ایڈ مشن ڈائریکٹر اے۔جے ریڈ ،وزیر زراعت پنجاب سید حسین جہانیاں گردیزی، چئیرمین چیمبر آف کامرس خواجہ محمد حسین،چیمبر آف کامرس کے نمائندگان پرائیویٹ سیکٹڑ کے نمائندگان انڈسٹری ترقی پسند کاشتکار ، جبکہ آن لائن سنیٹر مصدق ملک،سید نوید قمر سمیت دیگر موجود تھے۔

اس موقع پر ولیم میکینیول نے کہا کہ یہ میری خوش قسمتی ہے کہ میں جنوبی پنجاب کی اُبھرتی ہوئی یونیورسٹی میں آج موجود ہوں جس نے تھورے عرصے میں اپنا ایک نمایاں مقام بنایا ہے، اور مجھے خوشی ہے کہ آج کا یہ پروگرام زرعی یونیورسٹی ملتان میں کر رہے ہیں۔

میں وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر آصف علی (تمغہ امتیاز) کا مشکور ہوں کہ انہوں نے ہمیں یہاں بلایا اور جنوبی پنجاب کے پرائیویٹ سیکٹر کو گفت و شنید کا موقع فراہم کیا۔

صوبائی وذیر زراعت سید حسین جہانیاں گردیزی نے اس موقع پر کہا کہ ہم یو ایس ایڈ کے مشکور ہیں کہ جنہوں نے جنوبی پنجاب میں پرائیویٹ سیکٹر کے ساتھ مل کر زراعت،لائیو سٹاک اور خوراک کی بحالی کے لئے کام کر رہی ہے ،اس سے زراعت کے شعبہ میں مزید بہتری آئے گی۔

انہوں نے وائس چانسلر ڈاکٹر آصف علی کا بھی شکریہ ادا کیا اور کہاکہ یہ سب آپ کی لیڈر شپ کی وجہ سے ہے کہ جنوبی پنجاب میں زراعت ترقی کر رہی ہے اور یونیورسٹی اپنا رول احسن طریقے سے ادا کر رہی ہے۔

سید حسین جہانیاں گردیزی نے زرعی جامعہ ملتان کے اکڈیمک بلاک کا بھی افتتاح کیا۔

اس موقع پر مشن ڈائریکٹر اے۔جے ریڈ نے کہا کہ ٹیکسٹائل انڈسٹڑی کی بہتری کے لئے اپنا کردار ادا کرے گی۔

اس سلسلے میں منصوبہ بندی کر کے آپ لوگوں سے شئیر کرے گی۔

پاکستان کی ٹیکسٹائل انڈسٹری دنیا کی ٹیکسٹائل ضرورتوں کے لئے بہت اہم ہے اور اس انڈسٹری کی تنزلی پوری دنیا پر اثر انداز ہو گی۔اسی لئے US AID انڈسٹری کی بحالی ، اور ترقی کے لئے اپنا کردار ادا کرتی رہے گی۔

مزید کہا کہ انرجی منصوبوں پر انہیں دلچسپی ہے اور ان منصوبوں کو آگے لے جانے کی بھی حامی بھری۔

ٹیکنالوجی سیکٹر کے سیشن میں پرائیویٹ سیکٹر کی طرف سے ٹیکنالوجی کے مواقوں، مسائل اور ان کے حل کے لئے مستقبل کے لئے منصوبوں کے بارے میں بتایا اور کہا کہ جنوبی پنجاب میں پرائیویٹ سیکٹر کے ساتھ مل کر ٹیکنالوجی کے شعبہ میں کام جاری رکھے گا، اور پیش کئے گئے منصوبوں پر اپنا پلان پیش کرے گا۔

آخر میں انہوں نے زرعی جامعہ ملتان کی میزبانی پر شکریہ ادا کیا۔انرجی سیکٹر سیشن میں وفاقی وزیر برائے انرجی،پٹرولیم مصدق ملک اور پرائیویٹ انڈسٹری کے نمائندوں نے شرکت کی۔

اس موقع پر مصدق ملک نے انرجی کی رسد اور طلب کے بارے میں بتایا اور مختلف پراجیکٹس پر بریف کیا۔

پاکستان میں انرجی کے شعبے میں بہت زیادہ کام کرنے کی ضرورت ہے۔پاکستان میں کاربن فٹ پرنٹس بہت کم ہیں لیکن ماحولیاتی تبدیلی کی وجہ سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والا ملک ہے۔

شرکاء نے انرجی سیکٹر کی بحالی اور بہتری کے لئے اپنی تجاویز پیش کی اور اس بات کااعادہ کیا کہ مستقبل قریب میں پاکستان اپنی انرجی کی ضروریات کو پورا کرے گا۔

پروفیسر ڈاکٹر آصف علی نے کہا کہ ہم اس سیمنار میں جنوبی پنجاب کے پرائیویٹ سیکٹر کی ترقی کے لئے یو ایس ایڈاور چیمبر آف کامرس کے تعاون سے لائحہ عمل تیار کریں گے، اور کسی بہتر نتیجہ پر پہنچں گے۔

زرعی جامعہ ملتان پرائیویٹ سیکٹر اور انڈسٹری میں پائے جانے والے مسائل کو حل کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

مزید کہا کہ جنوبی پنجاب میں ایگری بزنس کے بے پناہ مواقع موجو دہیں ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم ان مواقوں سے فائدہ اُتھائیں ترقی میں پرائیویٹ سیکٹر کا بہت اہم رول رہا ہے۔

سیمنار میں کنول بخاری،مسٹر عادل،آصف مجید،ڈاکٹر شفیق پتافی، محسن گریزی،احسن رشید،ممتاز خان منیس، امتیاز ورائچ،میجر طارق خان،آصف حیات ٹیپو، یو ایس ایڈ کے دیگر نمائندگان،ڈاکٹر شفقت سعید،ڈاکٹر مبشر مہدی اور دیگر موجود تھے۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button

پاکستان میں کرونا وائرس کی صورت حال

گھر پر رہیں|محفوظ رہیں